سجاوٹ اور تحفہ، تخت بائی کے رنگا رنگ روایتی ہتھ پنکے

دلچسپ
49
0
sample-ad

مردان کی تحصیل تخت بائی کا بازار جھنڈی سادہ ہاتھ کے بنے پنکھوں کے لیے مشہور ہے۔ شاید یہی وجہ ہے کہ مردان کی رہائشی بسنامہ صبح صبح اسی بازار کا رخ کرتی ہیں۔
بسنامہ کا شمار ان خواتین میں ہوتا ہے جو ہاتھ سے سادہ پنکھوں کی تزئین و آرائش کا کام کرتی ہیں۔
ان کے مطابق پاکستان کے دیہاتی علاقوں میں اب بھی بجلی کی طویل لوڈشیڈنگ ایک عام سی بات ہے۔ چونکہ دیہاتوں کے لوگ سولر پینلز اور یو پی ایس تو لگانے سے رہے، لہٰذا یہاں آج بھی ہاتھ سے بنے ہوئے پنکھے استعمال ہوتے ہیں۔
جدید ٹیکنالوجی کی وجہ سے جہاں اس فن کی مقبولیت میں کمی آئی ہے، وہیں بسنامہ نے اپنے علاقے میں اس پرانی رسم کو زندہ رکھا ہوا ہے۔
ہاتھ سے بنے پنکھے اس خطے کی روایت کا ایک اہم حصہ ہیں۔ مہمند سے تعلق رکھنے والی 65 سالہ خاتون گل سران نے بتایا کہ ’آج سے پنتالیس سال پہلے، جب میری شادی ہو رہی تھی تو میری والدہ نے خاص طور پر ہمارے گاؤں کی ایک عورت سے میرے لیے دو ہاتھ کے پنکھے بنوائے تھے، جنھیں میں اپنے ساتھ جہیز میں لائی تھی۔‘
بسنامہ کے مطابق یہ روایت آج بھی قائم ہے۔ ’زیادہ تر خواتین اپنی بیٹیوں کی شادی کے لیے ہاتھ کے پنکھے بنواتی ہیں۔ ان پر طرح طرح کے ڈیزائن ہوتے ہیں۔ کچھ پر موتی لگانے کا آرڈر آتا ہے، تو کچھ خریدار اون کے دھاگے کی کڑاہی کا کہتی ہیں۔‘
ان کا کہنا تھا کہ وہ سادہ پنکھے خرید کر رکھ لیتی ہیں اور جب آس پاس کی عورتیں کچھ بنوانے آتی ہیں تو وہ آرڈر کے حساب سے ان پر سجاوٹ کا کام شروع کر دیتی ہیں۔
ہر ایک پنکھے کی سجاوٹ کے لیے وقت درکار ہوتا ہے، اور ہر نمونہ دوسرے سے مختلف ہوتا ہے۔
بسنامہ کا کہنا ہے کہ ایک پنکھے کی سجاوٹ کا کام مکمل کرنے میں چار سے پانچ دن لگ سکتے ہیں۔ ’مجھے ساتھ ساتھ گھر کے کام بھی کرنے ہوتے ہیں اور ان پنکھوں پر کڑھائی کرنے میں کافی وقت لگ جاتا ہے۔‘
مردان کی رہائشی شازیہ کی بڑی بیٹی کی عنقریب شادی ہونے والی ہے۔ وہ اسی غرض سے بسنامہ کے پاس ہاتھ کے بنے ہوئے پنکھوں کا آرڈر دینے آئی تھیں۔
ان کا کہنا ہے کہ: ’حالانکہ میری بیٹی کی شادی سردیوں میں ہے، لیکن پھر بھی میں اپنی بیٹی کو یہ پنکھے ضرور دوں گی۔ یہ ایسی چیز ہے جو گرمیوں میں سب سے کارآمد ثابت ہوتی ہے۔
ہاتھ کے بنے ہوئے یہ پنکھے 250 روپے سے لے کر 500 روپے تک کے فروخت ہوتے ہیں۔

sample-ad

Facebook Comments

POST A COMMENT.